Report adopted on 06-03-2012

Committe No.25 Report

 

صوبائی اسمبلی سیکرٹریٹ صوبہ خیبرپختونخوا

                                                                                              رپورٹ

میں  چیئرپرسن مجلس قائمہ نمبر25برائےمحکمہ اسٹیبلیشمنٹ اسمبلی کی جانب سے حوالہ کردہ سوال نمبر69 منجاب مفتی کفایت اللہ صاحب،ایم پی اے جو کہ  مورخہ  24/03/2011 کو مجلس قائمہ نمبر 25 کو حوالہ کیا گیا اور از خود نوٹس کے طور پر لیے گئے امور  پر رپورٹ پیش کرنے کا شرف حاصل کرتی ہوں۔

2۔                                کمیٹی  نے مور خہ یکم جون 2010،یکم مارچ 2011اور 11مئی 2011 کو منعقدہ اجلاسوں میں مذکورہ امور  پر غور کیا ۔جس میں درجہ ذیل اراکین کمیٹی نے  شرکت کی۔

                                                1۔                                بیرسٹر ارشد عبداللہ صاحب،                                                           وزیر قانون ،پارلیمانی امور وانسانی حقوق

   2                                               ۔                                جناب  خلیفہ عبدالقیوم صاحب ،                                                         ایم پی اے

                                                3۔                                جناب منور خان ایڈوکیٹ صاحب،                                              ایم پی اے

     4                                               ۔                             جناب اورنگزیب خان  صاحب،                                                       ایم پی اے

                                                5۔                                جناب آصف بھٹی صاحب،                                                                            ایم پی اے

                                                6۔                                جناب جعفر شاہ صاحب،                                                                                        ایم پی اے

                                                7۔                                محترمہ سنجیدہ یوسف صاحبہ ،                                                          ایم پی اے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

                                                 جناب مفتی کفایت اللہ صاحب،        ایم پی اے/محرک

3۔                                محرک نے اپنے سوال کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ صوبائی حکومت کس قانون کے تحت لوگوں کے اعزازات دینے کی سفارش کرتی ہے اس کا طریقہ کار کیا ہے ۔پسند ناپسند کی بنیاد پر یا بہادری ،دلیری و شجاعت اور اچھی کار کردگی کی بنا پر ایوراڈ کے لئے نامزدگیا ں یا سفاشات مرکزی حکومت کو بھیجی جاتی ہیں اگر میرٹ کی بنیاد پر اعزازات دیئے جاتے ہیں۔تو پھر مولانا حسن جان صاحب مرحوم سابقہ ایم این اے ،مولانا نورٕمحمد صاحب مرحوم ،سابقہ ایم این اے اور مولانا     معرا ج الدین صاحب مرحوم ،سابقہ ایم این اے کو اعزازات سے کیو ں محروم رکھا گیا ۔جنہیں دہشت گردی کے خلاف فتوے جاری کرنے کی پا داش میں شہید کیا گیا۔ان کی شہادت سے ملک و قوم کو نا قابل تلافی نقصان ہوا ۔پورا معاشرہ ان کی شہادت پر غم گسار تھا  ان تینوں اشخاص کو بہادری ،قابلیت ،تجربہ کاری اور دینی خدمات کی بنیاد پر اعزازات سے نوازا جانا چاہئے تھا۔لیکن بد قسمتی سے صوبائی حکومت نے ان تینوں علماء دین کو اعزازات سے محروم رکھا حالانکہ تینوں افراد سابقہ ممبران قومی اسمبلی بھی رہ چُکے ہیں اس کے علاوہ دہشت گردی اور خودکش حملوں کی برملا مذمت کرتے رہے ہیں اور فتوے بھی جاری کئے ہیں ۔مسلح افواج پر گولی چلانے کی مخالفت بھی کی ان وجوہات کی بنا پر ان کا زیادہ حق بنتا تھا کہ ان کی خدمات کےصلے  میں انہیں ایوارڈ سے نوازا جاتا۔مگر انہیں یکسرنظر  انداز کردیا گیا جس کی ذمہ داری صوبائی حکومت پر عائد ہوتی ہے ۔

4۔                                میاں محمد صاحب،ایڈیشنل سیکرٹری محکمہ انتظامیہ نےبتایا  کہ صوبائی حکومت وفاقی حکومت کی ہدایات پر ہر جنوری اور فروری میں سائنس ،کھیل و ثقافت ،ادب و صحافت اور طبی شعبہ جات میں ماہر افراد کی خدمات کے صلے میں ایوارڈز دینے کے لئے سفارشات مرتب کرکے ارسال کرتی ہے۔اس کے علاوہ بہادری ،دلیری و شجاعت کے حامل پولیس آفسران ،دیگر افراد اور ماتحت عملہ کی سفاشات بھی تیا ر کی جاتی ہیں ۔انہوں نے مزید بتایا کہ محکمہ انتظامیہ کیس تیا رکرکے چیف سیکرٹری صاحب سے منظوری لینے کے بعد حتمی منظوری کے لئے   وزیر اعلیٰ صاحب سے منظوری حاصل کی جاتی ہے اور بعد ازاں ان افراد کو ایوارڈز کے لئے نامزد کیا جاتا ہے ۔

5۔                                میاں محمد صاحب،ایڈیشنل سیکرٹری محکمہ انتظامیہ نےکمیٹی کو یقین دہانی کراتے ہوئے کہا کہ ان تینوں علماء دین جنہیں محرک نے تجویز کیا ہے کی نامزدگی انشاءاللہ آئندہ سال 2012ءمیں شامل کرنے کی بھرپور کوشش کی جائے گی۔

ازخود نوٹس

6۔                                چیئرمین صاحبہ نے کہا کہ اسٹینڈنگ کمیٹیو ں کاکام حکومتی اداروں کی نگرانی کرنا ہے ان کی کارکردگی کو بہتر سے بہتر بنانا ہے اور جہا  ں کہیں کوئی خامی نظر آئے اس کی نہ صرف نشاندہی کرنا بلکہ درست اقدامات اٹھانے کے لئے سفارشات بھی مرتب کرنا ہے ۔چونکہ محکمہ اسٹبلیمشمنٹ ایک ریگولیٹری محکمہ ہے رولز آف بزنس کے مطابق قواعد و ضوابط بنا کر تمام محکمہ جات سے ان  پر سختی سے عمل در آمد کرواتا ہے محکمہ اسٹبلیشمنٹ کی جانب سے مہیا کردہ  کوائف  کی روشنی میں یہ نتیجہ اخذ کیا جاسکتا ہے کہ محکمہ اسٹبلیشمنٹ قواعد و ضوابط تو بناتا ہے اور خود ان پر عمل درآمد نہیں کرتا محکمہ اسٹبلیشمنٹ کے مورخہ 5جولائی 1994ءکے نوٹیفیکیشن کے مطابق جونیئر افسران کی اعلیٰ عہدوں /پوسٹوں پر تعیناتی کو تیز تر ترقی سے تعبیر کیا گیا  ہے۔ محکمہ خزانہ کے نوٹیفیکیشن مورخہ 18جنوری 2007ء کے مطابق کسی جونیئر افسر کو اعلیٰ پوسٹ پرتعینات نہیں کیا جاسکتا اور اگر ایسا کرنا از حد ضروری ہوتو متعلقہ پوسٹ کو ڈاؤن گریڈ کیا جائے گا لیکن محکمہ اسٹبلیشمنٹ  ان ہدایت پر عمل در آمد نہیں کررہا ہے ۔انہوں نے مزید کہا کہ ضلعی رابطہ آفیسر کی آسامی بنیادی پے سکیل (20)میں ہے جبکہ ضلعی رابطہ آفیسر پشاور کی آسامی بنیادی پے سکیل (21) کی ہے۔ان تمام آسامیوں پر گریڈ 18اور 19جبکہ چترال میں بنیادی پے سکیل 17کا ایک آفیسر تعینات ہے۔کمیٹی نے دو یا تین درجہ اعلیٰ گریڈوں پر تعیناتی کو سمجھ سے بالا تر قرار دیا اور ہدایت کی کہ ان پوسٹو ں پر متعلقہ گریڈوں کے افسران تعینات کئے جا ئیں ۔

7۔                                جناب محمد فرید قریشی صاحب،سپیشل سیکرٹری محکمہ اسٹبلیشمینٹ نے کہاکہ محترمہ  کی راہنمائی میں محکمہ کی کارکردگی بہتر سے بہتر بنانے کی کوشش کی جائے گی اور احتساب کرنا ایک اچھا قدم ہے جس میں اسٹینڈنگ کمیٹیوں کا ایک اہم رول ہوتا ہے جس سے کسی کو انکار نہیں انہوں نے کہا کہ جمہوری دور میں زیادہ سے زیادہ مسائل ہوتے ہیں اور انہی مسائل کے حل کےلئے محکمہ اسٹبلیشمنٹ ہمہ وقت تیا ر ہے ۔انہوں نے صوبے میںاعلیٰ عہدوں پر جونیئر افسران کی تعیناتی سے متعلق وضاحت کرتے ہوئےبتایا کہ مرکزی حکومت سے افسران کی کمی کا سامنا ہے کیونکہ مرکزسے افسران اپنے کوٹے سے کم تعینات کئے جاتے ہیں بعض اوقات محکمہ میں کم سکیل کے ملازمین کو اعلیٰ سکیلوں والی آسامی پر تعینات کیا جاتا ہے ۔گریڈ 20اور21کے افسران ٹریننگ کے لئے سٹاف کالج میں نیشنل منیجمٹ کورس کے لئے نامزدکئے جاتے ہیں اور صوبے کو ایک ٕمخصوص کوٹہ دیا جاتا ہے کچھ افسران کے ڈیپوٹیشن پر چلے جانے کی وجہ سے پوسٹیں خالی ہوجاتی ہیں کچھ لوگ دو ذمہ داریاں نبھارہے ہیں کچھ لوگ اسلام آبادٹریننگ کے لئے گئے ہیں جس کی وجہ سے ہمارے پاس پوسٹیںٕ خالی پڑی رہتی ہیں اس لئے مجبوراً  انچلے گریڈ والے افسران کو اعلیٰ گریڈوں پر تعینات کیا جاتاہے ۔

8۔                                 جناب منور خان ایڈوکیٹ صاحب،ایم پی اے کا موقف تھا کہ جو افسران حکومت کے غلط احکامات نہیں مانتے ۔انہیں افسر بکار خاص  (OSD)بنا دیا جاتا ہے ۔لہٰذ ا کم از کم ضلعی سطح پر دیانتدا ر ،اہل اور میرٹ کے مطابق افسران کو ضلع میں تعینات کرنا چاہیے۔

9۔                                 جناب قیصرعالم صاحب،ایڈیشنل سیکرٹری محکمہ اسٹبلیشمنٹ نےچیئرپرسن کو یقین دلایا کہ اُن کی راہنمائی میں محکمہ عملہ کی کارکردگی بہتر سے بہتر بنانے کی کوشش کی جائےگی خود اپنا احتساب کرنا ایک اچھاقدم ہے ۔ اُنہوں نے کہا کہ گریڈ 17کے افسران جو گریڈ 19یاگریڈ20کی آسامیوں پر تعینات ہیں اور گریڈ18اورگریڈ19کے جوافسران گریڈ20یا گریڈ21کی آسامیوں پر تعینات ہیں کی وجہ فی الوقت سینئر افسران کی صوبہ میں شدید کمی ہے اُنہوں نے مزید بتایا کہ چونکہ  سینئرگریڈکی آسامیوں کو خالی  نہیں رکھا جاسکتا اس لئے وقتی طورپر جونیئر افسران کو ان آسامیوں پر تعینات کیا جاتا ہے جو ایسی آسامیوں کے حوالے سے تجربہ اور مہارت رکھتے ہیں محکمہ عملہ پوری تندہی سے اس مسئلہ پر کام کررہا ہے اور امید ہے کہ مذکورہ مسئلے کاحل جلدنکالا جائے گا۔

10۔  سفارشات

(i)               محکمہ عملہ تمام آسامیوں کو صوبائی حکومت کے منظورشدہ قواعد و ضوابط کے مطابق سینیارٹی کی بنیاد پر ایکٹنگ چارج یا کرنٹ چارج کی بنیاد پر کرے۔

(ii)            دو یا تین بلکہ چا ر چار عہدے رکھنے والے افسران سے زائد پوسٹیں لیکر افسران بکار خاص کو دی جائیں تاکہ افسران بکار خاص کی تعداد میں کمی لائی جاسکے۔

(iii)          سیکرٹریٹ میں محکمہ عملہ کے توسط سے پُر کی جانے والی کئے آسامیاں عرصہ دراز سے خالی پڑی ہیں جس سے محکمہ جات کی کارکردگی بُری طرح متاثر ہورہی ہے جبکہ گریجویٹ نوجوان روزگار کے حصول کے لئے مارے مارے پھیر رہے ہیں محکمہ عملہ تمام خالی آسامیاں دو ماہ کے اندر اندر پُر کرے۔

(iv)           تمام جونیئر آفسران جو اعلیٰ آسامیوں پر قواعد و ضوابط کو بالائے طاق رکھ کر تعینات کئے گئے ہیں کو فوراً واپس اپنے بنیادی سکیلوں میں تعینات کیا جائے اور اعلیٰ آسامیوں کو قواعد کے مطابق پُر کیا جائے۔

11۔                      رپورٹ بغرض منظوری ایوان میں پیش کی جاتی ہے

 نور سحر

                                                                                                                                                                                                                                                                                                           چیئرپرسن مجلس قائمہ نمبر25

                                                                                                                                                                                                                                                              اسٹیبلیشمنٹ